صفر المظفر اور نحوست كا مسئلہ2

Table of Contents

 

بدشگونی شرکِ اصغر ہے

بدشگونی یعنی کسی چیز کو منحوس خیال کرنا شریعت میں سختی سے ممنوع ہے:

عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَسْعُودٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "الطِّيَرَةُ شِرْكٌ الطِّيَرَةُ شِرْكٌ ثَلَاثًا، ‏‏‏‏‏‏وَمَا مِنَّا إِلَّا وَلَكِنَّ اللَّهَ يُذْهِبُهُ بِالتَّوَكُّلِ".

عبداللہ بن مسعود ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے تین بار فرمایا:" بدشگونی شرک ہے اور ہم میں سے ہر ایک کو وہم ہو ہی جاتا ہے لیکن اللہ اس کو توکل سے دور فرما دیتا ہے "۔()

()۔سنن ابي داود / کتاب: کہانت اور بدفالی سے متعلق احکام و مسائل / باب : بدشگونی اور فال بد لینے کا بیان ۔حدیث نمبر: 3910،سنن الترمذی/السیر 47 (1614)، سنن ابن ماجہ/الطب 43 (3538)، (تحفة الأشراف: 9207)، مسند احمد (1/389، 438، 440) ، شیخ البانی رحمہ اللہ نے اس حدیث کو صحیح قرار دیا۔

جامع ترمذی کے شارح مولانا عبدالرحمٰن مبارک پوریفرماتے ہیں:

آپ کا فرمان'بدشگونی شرک ہے' یعنی لوگوں کا یہ عقیدہ تھا کہ بدشگونی (کسی چیز کو منحوس سمجھنا) نفع لاتی ہے یا نقصان دور کرتی ہے تو جب اُنھوں نے اسی اعتقاد کے مطابق عمل کیا تو گویا اُنھوں نے اللہ تعالیٰ کے ساتھ شرکِ خفی کا ارتکاب کیا اور کچھ لوگ یہ کہتے ہیں کہ اس کا مطلب یہ ہے کہ جو شخص یہ عقیدہ رکھے کہ اللہ تعالیٰ کے علاوہ کوئی اور چیز بھی نفع یا نقصان کی مالک ہے تو اسنے شرکِ اکبر کا ارتکاب کیا۔''()

()۔ج5؍ص197

نبی کریمﷺنے دوسری جگہ فرمایا:

"مَنْ رَدَّتْهُ الطِّیَرَةُ عَنْ حَاجَتِه فَقَدْ أَشْرَكَ"

" جو شخص بدشگونی کے ڈر کی وجہ سے اپنے کسی کام سے رک گیا یقیناً اس نے شرک (اصغر) کا ارتکاب کیا۔"()

()۔مسند احمد: 2؍220

لہٰذا ماہِ صفر کو منحوس خیال کرنا، نحوست کی وجہ سے اس مہینے میں شادیاں کرنے سے رکے رہنا، اس میں مٹی کے برتن ضائع کردینا، ماہ صفر کے آخری بدھ یعنی چہار شنبہ کو جلوس نکالنا اور بڑی بڑی محفلیں منعقد کرکے خاص قسم کے کھانے اور حلوے تقسیم کرنا اور چُوری کی رسم ادا کرنا وغیرہ ان احادیث کے مطابق مردود اور شرکیہ عمل ہے جس سے ہر صورت میں اجتناب ضروری ہے۔

 

آخری بدھ کی خرافات

بعض حضرات و خواتین صفر المظفر کے آخری بدھ کو تعطیل(چھٹی) کرکے کاروبار اور دکانیں بند کردیتے ہیں اور عید کی طرح خوشیاں مناتے ہیں اور سیر سپاٹے کے لیے گھروں سے نکل جاتے ہیں جس کی وجہ یہ بیان کی جاتی ہے کہ جناب نبی اکرمﷺاس آخری بدھ میں صحت یاب ہوئے تھے اور سیر و تفریح کے لیے باہر تشریف لے گئے تھے حالانکہ اس دعوی کی اصل نہ حدیث میں ہے اور نہ ہی تاریخ کی کتابوں میں موجود ہے۔ لہٰذا یہ ساری بدعات لغو اور دین حنیف میں اضافہ ہیں، شریعت میں ان کا کوئی جواز نہیں۔ اسی بات کو واضح کرتے ہوئے علامہ رشید احمد گنگوہی حنفی رقم طراز ہیں:

''آخری چہار شنبہ کی کوئی اصل نہیں بلکہ اس دن جناب رسول اللہﷺ کو شدتِ مرض واقع ہوئی تھی۔ یہودیوں نے خوشی منائی تھی، وہ اب جاہل غیر مسلموں اور( مسلمانوں) میں رائج ہوگئی ہے۔''()

()۔تالیفات رشیدیہ: 154

فاضل بریلوی احمد رضا خان چہار شنبہ کے بارے لکھتے ہیں:

''آخری چہار شنبہ کی کوئی اصل نہیں، نہ اس دن صحت یابی حضور کا کوئی ثبوت بلکہ مرضِ اقدس جس میں وفاتِ مبارک ہوئی اسکی ابتدا اسی دن سے بتائی جاتی ہے۔''()

()۔احکام شریعت: 2؍189

 

صفر المظفر اور تیرہ تیزی

مغربی دنیا تیرہ (13) کے عدد کو منحوس سمجھتی ہے، یہی فاسد خیالات مسلم قوم میں در آئے ہیں، اس لیے صفر کی خصوصاً ابتدائی تیرہ تاریخوں کو منحوس گمان کیا جاتا ہے۔ ان ابتدائی تیرہ دنوں کو تیرہ تیزہ کا نام دیا جاتا ہے، ان کی نحوست کو زائل کرنے کے لیے مختلف عملیات کیے جاتے ہیں حالانکہ یہ سب جہالت کی باتیں ہیں۔ دین اسلام کے سنہری اوراق ایسے توہمات سے پاک ہیں اور ان دنوں میں سے کسی دن کو منحوس سمجھ کر شادی سے رک جانے کی بھی اسلام میں کوئی گنجائش نہیں ہے۔ بعض لوگ سمجھتے ہیں کہ ان تیرہ دنوں میں کثرت سے بلاوٴں، آفتوں اور مصائب کا نزول ہوتا ہے۔

مولانا اشرف علی تھانوی 'بہشتی زیور' میں لکھتے ہیں:

''صفر کو تیرہ تیزی کہتے ہیں اور اس مہینے کو نامبارک جانتے ہیں اور بعض جگہ تیرہویں تاریخ کو کچھ گھونگنیاں وغیرہ پکا کر تقسیم کرتے ہیں کہ اس کی نحوست سے حفاظت رہے، یہ سارے اعتقاد شرع کے خلاف اور گناہ ہیں، توبہ کرو۔"()

()۔بہشتی زیور، چھٹا حصہ: 59

علامہ وحید الزمان رقم طراز ہیں:

''افسوس کہ اب تک ہندوستان کے مسلمان ایسے واہی خیالات میں مبتلا ہیں کسی تاریخ کو منحوس کہتے ہیں، کسی دن کو نامبارک جانتے ہیں، تیرہ تیزی کے صدقے نحوست کو دفع کرنے کے لیے نکالتے ہیں، اسلام میں ان باتوں کی کوئی اصل نہیں، سب دن اللہ کے ہیں اور جو اُس نے تقدیر میں لکھ دیا ہے وہ ضرور ہونے والا ہے، نجومی اور پنڈت سب جھوٹے ہیں۔''()

()۔لغات الحدیث: 2؍605

 

صفر المظفر کے چند واقعات

واقعات                               سن ہجری           سن عیسوی

غزوہٴ ابواء،ودان                                                2ھ                    اگست 623ء

واقعہ رجیع                     4ھ                    جولائی 625ء

واقعہ بئر معونہ                                                                     4ھ                                                                                          جولائی 625ء

سیدنا خالد بن ولید، عمرو بن عاص اورعثمان بن طلحہ کا قبولِ اسلام                              8ھ                                                                             جون 629ء

سریہ سیدنا قطبہ بن عامر                                                     8ھ                                                                                    مئی 630ء

وفد بنو عزرہ کا قبول اسلام                                              9ھ                                                                                            مئی 630ء

لشکرِسیدنا اُسامہ بن زید کی تیاری                            11ھ                                                                                    مئی 632ء

فتح مدائن                                                                                     16ھ                                                                                 مارچ 637ء

ولادتِ امام ابو القاسم سلمان بن احمد طبرانی          260ھ                                                                 دسمبر 873 ء

ولادتِ امام ابو حفص بن شاہین                  297ھ                                                                             اکتوبر 909ء

پہلی جنگِ عظیم کا خاتمہ                                                        1337ھ                                                                              نومبر 1918ء

 

از حافظ عمران الہی حفظہ اللہ ،http://magazine.mohaddis.com/shumarajaat/24-jan2012/960-safar-ul-muzafar-or-nhoosat-ka-masla.html

25 Views
ہماری اصلاح کریں یا اپنی اصلاح کرلیں
.
تبصرہ
صفحے کے سب سےاوپر